• RSS
  • Google Plus
  • Facebook
  • Twitter
  • Linkedin
  • Pakistan Agriculture and Farming Cover

    Welcome to PakAgriFarming

    PakAgriFarming is commited to high standards in extension of agriculture in Pakistan through simple and factual information and topics related to the hottest issues in Pakistan Agriculture.

  • Approved cotton varieties for Punjab 2014

    کپاس کی کاشت کے لیے موزوں اقسام

    پنجاب میں کپاس کی کاشت کا آغاز ہو نے والا ہے اور پیشتر علاقوں میں میں رنیع کی فصل کی برداشت کا وقت قرہب ہے۔ اس لیے بروقت کپاس کے بیج کا انتخاب اچھی پیداوار حاصل کرنے کی طرف پہلا قدم ہے۔۔۔

  • Introduction, characteristics and objectives of tillage

    Intoduction and Objectives of Tillage

    Tillage is the primary requirement before any cropping activity. Perhaps, if one is ignorant about tillage, he knows nothing about farming. So, let's look into a brief intro...

  • The Next 10 Years of Tunnel Farming in Pakistan

    The Next 10 Years of Tunnel Farming in Pakistan

    It's been 10 years since the introduction of tunnel farming in Pakistan, the conversion rate has been slow but are there any chance of rapid growth of tunnel farming in Pakistan? Let's disover...

  • Wheat Production Technology for Rainfed Areas of Punjab for 2013-14

    Wheat Production Technology for Rainfed Areas of Punjab for 2013-14

    Wheat is the most important cereal crop in Pakistan and staple food. Wheat has a large share of cultivated land in rabi season and hence large production is expected...

PakAgriFarming

Wednesday, November 20, 2013

ٹماٹر کی پیداواری ٹیکنالوجی 14-2013

Posted by Unknown On Wednesday, November 20, 2013

ٹماٹر پاکستان میں انتہائی مقبول سبزی کی حیثیت رکھتا ہے۔  اس کا زیادہ تر استعمال کھانا پکانے میں ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ ٹماٹر کا اہم استعمال کیچپ میں ہوتا ہے۔ اس لیٔے پاکستان میں ٹماٹر کی کاشت کسان کے لیٔے منافع بخش ثابت ہوسکتی ہے۔ اس لیٔے ضروری ہے کہ ٹماٹر کی کاشت جدید پیداواری طریقہ کار سے کی جانی چاہیے۔ ذیل میں 
زرعی ماہرین کی تجاویز پر مبنی پیداواری ٹیکنالوجی دی جا رہے ہے۔

Tomato Production Technology in Pakistan urdu language
زمین کا انتخاب        
ٹماٹر کے لیٔے اچھی نکاسیٔ آب کی حامل زرخیز زمین کو منتخب کیا جائے۔
وقتِ کاشت  
جولائی تا ستمبر
پنجاب
جولائی تا اکتوبر
سندھ
ستمبر، اکتوبر یا اپریل
بلوچستان
جون تا اگست
خیبر پختونخواہ
نرسری کی تیاری
زمین پر ایک فٹ اونچے، چار فٹ چوڑے اور چھ فٹ لمبے بیڈ بنا لیں۔ اور چوڑائی کے رُخ آدھا انچ گہری لائنیں بنائیں جن کا کا درمیانی فاصلہ کم سے کم ۲ انچ تک ہو۔ اس مقصد کے لیٔے ڈیڑھ انچ قطر کا سریہ یا چھڑی بھی استعمال کی جا سکتی ہے۔
بعد ازاں بیج کو ان لائینوں کے درمیان اس طرح ڈالیں کہ بیج ایک دوسرے کے اوپر نہ آئیں۔ پھربیجوں کو مٹی سے ڈھانپ دیں اور مناسب مقدار میں پانی لگا دیں۔
نرسری کی منتقلی
تیارشدہ نرسری کی منتقلی سے ۲ دن پہلے نرسری میں پانی دینا بند کر دیں تاکہ پودے سخت جان ہو جائیں۔ اور پھر منتقلی سے تقریباً ۲ یا ۳ گھنٹے پہلے پانی لگائیں تاکہ پودوں کو اُکھاڑنا آسان ہو سکے۔
شرحِ بیج
 گرام فی ایکڑ80  تا60
                                                             فی ایکڑ10,000  سے 8,000 : پودوں کی تعداد
طریقہِ کاشت
فٹ کی پٹڑی5  فٹ سے4.5
دو طرفہ بیجائی کی صورت میں
 فٹ1.5
پودے سے پودے کا فاصلہ
کھادوں کا استعمال    
بوری پوٹاش 2+ بوری ہوریا 1/2+ بوری ڈی اے پی 2
بیجائی کے وقت
آدھی بوری یوریا
پہلی کھاد کے
ہفتے بعد 4-3
ایک نائٹروفاس
دوسری کھاد کے
ہفتے بعد 4-3
نرسری کی منتقلی کے دوران جڑوں کو کسی کمرشل اور قابلِ اعتماد بائیو فرٹیلائزر کے محلول میں ۲۰منٹ کے لیٔے بھگو کر کھیت میں لگانا مفید ہو سکتا ہے۔
بائیو فرٹیلائیزر کا استعمال
فصل اور زمین کی ضرورت کے مطابق مائیکرو نیوٹرینٹ والی کھاد کا استعمال کیا جانا ضروری ہے۔
دیگر مائیکرو نیوٹرینٹ کھادوں کا استعمال
آبپاشی
نرسری کھیت میں منتقل کرتے وقت پانی دینا ضروری ہے اور بعد میں ہفتہ وار پانی لگائیں۔ موسمی صورتِ حال اور فصل کی ضرورت کے مطابق پانی کی مقدار اور وقفے میں تبدیلی لائی جا سکتی ہے۔
ٹماٹر کی بیماریاں اورکیڑے اور انکا تدارک
ٹماٹر کے پودے پر تیلا، سفید مکھی، چور کیڑا اور لیف مائینر کا حملہ ہو سکتا ہے۔ اس کے علاوہ جڑوں کا گلنا اور جراثیمی سوکھنا عام بیماریاں ہیں جن کے تدارک کے لیٔے محکمۂ زراعت کے نمائندے کے مشورے سے ادویات کا استعمال کریں۔
وقتِ برداشت
پھل کی برداشت ضرورت کے مطابق کریں ارو اگر پھل دور لے کر جانا مقصود ہو تو پھل کو سبز حالت میں برداشت 
کرلیں۔